انہوں نے خود مجھے جیت جانے دیا

کھٹی میٹھی زندگی

میرے ننہال میں میری امی کی ایک خاص حیثیت اور بڑا مقام تھا میرے ایک ماموں جو میری امی سے چھوٹے تھے ان سے میرا کافی لگاؤ تھا ان کا میری نظر میں عزت و احترام بہت زیادہ تھا مگر ہماری نوک جھونک بھی ہوتی رہتی تھی ان کا مارکیٹ میں ایک بہت بڑا ڈپارٹمینٹیل اسٹور تھا جس میں ایک جگہ سبزی اور پھل کی بھی تھی
ایک دن میں ان کے اسٹور پر گیا اور چُن چُن کر پھل لینے لگا وہ مجھے دیکھتے رہے اور بولے آج کوئی خاص بات ہے کیا؟ میں نے پھل ڈالتے ہوئے ان کی طرف دیکھے بغیر کہا اپنی امی کے لیے پھل خرید رہا ہوں جب میں کیش کاؤنٹر پر آیا تو میرے ساتھ ساتھ آئے اور کیشیر سے بولے کہ پیسے نہ لینا. میں نے پھل وہیں رکھ دیے اور ان سے کہا کہ میں یہ پھل لے کر بھی نہیں جاؤں گا اور کہا کہ دیکھیں میں خود کماتا ہوں اور اپنی امی کے لیے خرید کر پھل لے کر جانا چاہتا ہوں انہوں نے کچھ لم پیسے لینا چاہے پر میں نے وہ بھی انکار کر تو وہ میری یہ بات بھی مان گئے جب میں نے پیسے ادا کر دئے تو انہوں نے مجھے رکنے کا اشارہ کیا اور ساتھ ہی اپنے ایک سیلز مین کو کچھ اور پھل لانے کو کہا میں خاموش کھڑا رہا جب وہ پھل لے آیا تو مجھے کہنے لگے کہ یہ میری طرف سے اپنی امی کو دے دینا میں نے پھر انکار کر دیا اور کہا کہ میں نے اپنی امی کے لیے پھل لے لیے ہیں اور آپ اپنی بہن کو یہ پھل خود بھیجیں جس کے بھی ہاتھ مرضی. آپ اُن سے چھوٹے ہیں بہت بہتر تو یہ ہو گا کہ آپ خود ہی لے کر جائیں انہوں نے بہت تحمل سے میری بات سُنی، مسکراتے رہے، بالکل بھی بُرا نہیں منایا یا مجھ پر ظاہر نہیں ہونے دیا اور اُس وقت میں سمجھا کہ میں جیت کر جا رہا ہوں جب کہ بہت دیر کے بعد مجھے ایک دن یہ سمجھ آیا کہ انہوں نے خود مجھے جیت کر جانے دیا تھا

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
W Iqbal Majidانہوں نے خود مجھے جیت جانے دیا

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *