خوشی کا راز

ایک دفعہ میں نے نیلی چڑیا سے پوچھا کہ تمہیں دنیا کا سب سے زیادہ خوش رہنے والا پرندہ مانا جاتا ہے. مجھے بھی اس خوشی کا راز بتا دو اور کیا تمہاری زندگی میں کوئی غم یا کوئی دکھ نہیں آتا. وہ بولی ایسا نہیں ہے میری زندگی بھی ایسی ہی ہے جیسی تمہاری. میری زندگی میں بھی دکھ, غم, نفرت اور غصہ سب کچھ موجود ہے. مگر تم خود سوچو, یہ چیزیں تو ہماری زندگی میں آتی ہی رہتی ہیں. اگر یہ جمع ہوتی رہیں تو دماغ میں صرف یہی چیزیں رہ جائیں گی. پھر یہ ہر وقت ہمیں ستاتی رہیں گی اور غمگین رکھیں گی. میرے دماغ میں بھی اِن کے انبار لگے ہُوے تھے. میں بھی اِن سے بہت تنگ تھی اور ہر وقت پریشان رہتی تھی.
میں نے ایک دفعہ اللہ تعالیٰ سے دعا کی کہ وہ میرے دماغ کی یاداشت کے اُس حصے کو ختم کر دے جس میں دکھ, غم, نفرت, غصے اور بدلے بھرے ہُوے ہیں. بس اُس نے میری دعا سن لی اور میری یادداشت کا وہ تلخ حصہ ختم کر دیا. اب کبھی کبھار اگر کوئی بھی میرے ساتھ بُرا روّیہ اختیار بھی کرتا ہے تو میں اُسی وقت بُھول جاتی ہوں اور پرانے گِلے، غصے اور بدلے تو مجھے یاد ہی نہیں رہتے کیوں کہ میرے دماغ میں تو ان کو جمع کرنے والا حصہ ہی نہیں ہے. اِس طرح میرے پاس ہر وقت خوشی ہی خوشی ہوتی ہے. سچی بات یہ ہے کہ مجھے تو یاد بھی نہیں کہ پچھلی دفعہ میں کب غمگین ہُوئی تھی.

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
W Iqbal Majidخوشی کا راز