کامیابی اور ایکسیلینس

کہتے ہیں کامیابی کی ایک قیمت ہوتی ہے جو لوگ یہ قیمت ادا کرتے ہیں وہی کامیاب ہوتے ہیں. یہ درست ہے اس لیے کہ کامیابی کے پیچھے عام طور پر دو محرک ہیں ایک دولت اور دوسرا شہرت. اگر ہمیں کامیاب ہونا ہے یا دولت اور شہرت پانا ہے تو اس کی قیمت دینا پڑے گی اور کام بھی عقل اور سمجھ سے کرنا پڑے گا.. جب کہ ایک اور چیز ہے جس کا نام ہے ایکسیلینس. جو کبھی کوئی قیمت نہیں مانگتی. یہ جنون سے آتی ہے اور انسان کو ایسی خوشی دیتی ہے جس کا کامیابی کے رستے میں تصور بھی نہیں کیا جا سکتا اگر انسان ایک دفعہ ایکسیلینس کی خوشی دیکھ لے تو دوبارہ کامیابی کا نام بھی نہ لے کیوں کہ یہ اتنی خاص ہے کہ ایسے انسان کو اس کا اندازہ بھی نہیں ہو سکتا جو اس سے ہم کنار نہ ہوا ہو. اور جس جنون سے یہ آتی ہے وہی جنون انسان کو قابلیت کی معراج تک بھی پہنچاتا ہے. جہاں انسان قابلیت کے پہلے سے بنائے گئے معیار کو اور اونچا کر دیتا ہے. اس طرح جب انسان ایکسیلینس تک پہنچتا ہے تو کیا دیکھتا ہے کہ کامیابی, دولت, شہرت, عقل اور سمجھ تو ایکسیلینس کو سجدہ کر رہی ہوتی ہیں.

  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
  •  
W Iqbal Majidکامیابی اور ایکسیلینس

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *